پاکستان کی خبریں

تولیدی صحت کا پتا اب اسمارٹ فون کے ذریعے

نیویارک: بے اولادی کی وجہ مرد اور خاتون دونوں ہی ہوسکتے ہیں جب کہ بے اولادی کے ضمن میں سب سے پہلے مرد و خاتون کے تولیدی مادے کا ٹیسٹ لیا جاتا ہے لیکن اب اسمارٹ فون سے جڑنے والے ایک چھوٹے آلے کے ذریعے وہ مرد حضرات گھر بیٹھے اپنا ٹیسٹ کرسکتے ہیں جو ڈاکٹروں کے پاس جاکر ٹیسٹ کرانے میں کسی قسم کی جھجھک محسوس کرتے ہیں۔

آلے کو ’’ یو اسپرم کِٹ‘‘ کا نام دیا گیا ہے جس پر مرد حضرات نطفے کا ایک قطرہ ڈال کر اس میں تولیدی اجزا کی تعداد اوران کی تاثیر معلوم کرسکتے ہیں،یو اسپرم ٹیسٹ امریکی کمپنی میڈیکل الیکٹرانکس نے تیار کیا ہے،50 ڈالر کے اس آلے کو امریکی فوڈ اینڈ ڈرگ اتھارٹی ( ایف ڈی اے) نے استعمال کے لیے منظور کرلیا ہے۔

اسپرم ٹیسٹ کٹ مادہ تولید کا نمونہ (سیمپل) جمع کرنے والے ایک کپ، ٹیسٹنگ سلائیڈ، پلاسٹک پپٹ اور مائع کرنے والے سفوف پر مشتمل ہے۔ میڈیکل الیکٹرانکس سسٹم کی سی ای او مارسیا ڈیوچ کے مطابق ہر روز میڈیکل ایپ بازار میں آرہی ہیں اور اب لوگ اسمارٹ فون کے ذریعے تولیدی صحت اور مادہ منویہ میں جراثیم کی تعداد بھی معلوم کرسکتے ہیں۔

مارسیا کے مطابق اکثر ٹیسٹ خواتین کے لیے ہی بنائے گئے ہیں لیکن اب تک مردوں کے لئے اسمارٹ فون کٹ کا کوئی ٹیسٹ نہیں بنایا گیا تھا۔ کمپنی کا دعویٰ ہےکہ 5 ہزار روپے والی اسپرم کِٹ 97 فیصد درستگی کے ساتھ مردوں کو یہ بتاتی ہے کہ وہ باپ بن سکیں گے یا نہیں۔ اس میں ایک چھوٹی خوردبین بھی اسمارٹ فون کیمرے سے منسلک ہوجاتی ہے جو جراثیم کی حرکت کو نوٹ کرتی ہے، اس کے علاوہ نمونے میں اسپرم کی تعداد کا شمار بھی کرتی ہے۔

یو اسپرم کِٹ آئی فون کے نئے ماڈلز کے علاوہ گیلکسی ایس 6 اور ایس 7 پر کام کرتی ہے تاہم یہ آئی فون کے پلس ماڈل کے لئے کارآمد نہیں ۔